گوگل نے دھندلی تصاویر کو واضح کرنے کی ٹیکنالوجی متعارف کرا دی

Google AI Technology
02ستمبر2021
(فوٹو : بشکریہ گوگل)

ویب ڈیسک: (کیلیفورنیا) اگر آپکی کوئی قیمتی تصویر اتنی دھندلی ہے کہ ٹھیک سے سمجھ میں بھی نہ آ سکے تو پریشان ہونے کی ضرورت نہیں! گوگل نے نہایت دھندلی تصاویر کو بالکل واضح کرنے کی ٹیکنالوجی متعارف کرا دی۔

اب تک ہم نے سادی تصاویر کو مصنوعی ذہانت (اے آئی) کی مدد سے متحرک کر کے دیکھا ہے۔ اگلے مرحلے میں گوگل نے انتہائی بھدی اور کم وضاحتی (لوریزولوشن) تصاویر کو واضح اور بلند معیاردینے کا کامیاب تجربہ کیا ہے۔ یہاں تک کہ بعض تصاویر میں آنکھیں اور دیگر نقوش غائب ہیں لیکن گوگل الگورتھم نے اسے بڑی خوبصورتی سے مکمل کر دکھایا ہے۔

گوگل نے اپنے بلاگ میں اس ٹیکنالوجی کی تفصیلات اور بعض تصویری مثالیں دی ہیں۔ گوگل میں اے آئی کا ایک الگ سے شعبہ ہے جو کئی میدانوں میں متحرک ہے۔ اس نئی ٹیکنالوجی کو ’ہائی فائڈیلٹی امیج جنریشن یوزنگ ڈیفیوژن ماڈل‘ کا نام دیا گیا ہے۔ اس کی بدولت اہلِ خانہ کی پرانی اور دانے دار تصاویر کو بالکل نیا کیا جا سکتا ہے۔

اسی ٹیکنالوجی کو سی سی ٹی وی کی ویڈیوز اور تصاویر واضح کرنے کیلئے بھی استعمال کیا جا سکتا ہے۔ دوسری جانب طبی عکس نگاری کے معیار کو بڑھا کر مرض کی شناخت اور مریضوں کی جان بچانے میں بہت مدد مل سکے گی۔ ڈیفیوژن ماڈل سے صرف چند سیکنڈوں میں تصویر واضح، صاف اور بلند وضاحتی ہو جاتی ہے۔

گوگل کے مطابق یہ ٹیکنالوجی مصنوعی ذہانت استعمال کرتے ہوئے تصاویر سے نوائز (یعنی دانے) کم کرتی ہے اور اس دوران اے آئی بتاتی ہے کہ تصویر کے اجزا کس طرح مرتب ہوں گے اور اس طرح ایک واضح تصویر سامنے آتی ہے۔ اسے گوگل نے سپر ریزولیوشن براستہ ریپیٹڈ ریفائنمنٹ کا نام دیا ہے جس کا مخفف ایس آر تھری ہے۔

اس کی بدولت تبدیل شدہ تصاویر دیکھ کر حیرت ہوتی ہے کیونکہ اصل کے مقابلےمیں تبدیل شدہ تصاویر بہت واضح بنتی ہے گویا کسی دھندلی شبیہہ سے اصل اور فطری تصویر واضح ہوتی ہے۔ بسا اوقات مشکل سے پہچانے جانے والے چہرے بالکل واضح ہو کر سامنے آ جاتے ہیں۔

Facebook Comments