علی ظفر اور میشا شفیع کے درمیان قانونی جنگ نئے موڑ پر آ گئی! گلوکارہ نے نیا قدم اٹھا لیا

12اپریل2019
(فو ٹو فائل)

ویب ڈیسک: (اسلام آباد) گلوکارہ میشا شفیع نے گلوکار و اداکار علی ظفر کی جانب سے انکے خلاف ہرجانہ کیس میں ہائیکورٹ کا فیصلہ سپریم کورٹ میں چیلنج کر دیا ہے۔

میڈیا رپورٹس کے مطابق تین روز قبل لاہور ہائی کورٹ نے میشا شفیع کے خلاف علی ظفر کے ہرجانہ کیس کا فیصلہ تین ماہ میں سنانے کا حکم دیا تھا تاہم اب میشا شفیع نے لاہور ہائی کورٹ کے اس فیصلے کو سپریم کورٹ میں چیلنج کر دیا ہے۔ میشا شفیع نے درخواست دائر کرتے ہوئے مؤقف اختیار کیا ہے کہ ٹرائل کورٹ نے گواہان پرجرح مؤخر کرنے کی اجازت نہیں دی، گواہان کو سنے بغیر صرف ان کے بیان کی بنیاد پر جرح کرنا ممکن نہیں، سپریم کورٹ گواہان پر جرح کی اجازت دیتے ہوئے ہائی کورٹ کا حکم کالعدم قرار دے۔

یاد رہے کہ اس سے قبل سیشن عدالت نے کیس کا فیصلہ 15 روز میں سنانے کا حکم دیا تھا جسے میشا شفیع نے لاہور ہائی کورٹ میں چیلنج کیا تھا بعد ازاں لاہور ہائی کورٹ نے سیشن کورٹ کا فیصلہ تبدیل کرتے ہوئے ہرجانہ کیس کا فیصلہ 15 روز کے بجائے تین ماہ میں کرنے کا حکم دیا تھا۔

خیال رہے کہ علی ظفر نے میشا شفیع کے خلاف ہتک عزت کا دعویٰ دائر کر رکھا ہے۔ علی ظفر کے مطابق میشا شفیع نے سستی شہرت کے لئے ہراساں کرنے کے بے بنیاد الزامات عائد کئے۔

علی ظفر کا کہنا ہے کہ میشا شفیع کے ان جھوٹے الزامات سے پوری دنیا میں ان کی شہرت متاثر ہوئی۔ علی ظفر نے عدالت سے استدعا کی ہے کہ عدالت میشا شفیع کو سو کروڑ(ایک ارب) روپے ہرجانہ ادا کرنے کا حکم صادر کرے۔

Facebook Comments