woh chairag zeist ban kar raah mein jalta raha
haath mein woh haath le kar Umar bhar chalta raha

aik ansoo yaad ka tapka to darya ban gaya
zindagi bhar mujh mein aik tufaan sa palta raha

jantee hon ab usay mein pa nahi sakti magar
har jagah saaye ki soorat sath kyun chalta raha

jo meri nazron se oojhal ho chuka muddat hui
woh khayalon mein basa aur shair mein dhalta raha

ranj tha ‘gulnaar’ mujh ko is ko bhi afsos tha
der taq rota raha aur haath bhi milta raha

وہ چراغ زیست بن کر راہ میں جلتا رہا
ہاتھ میں وہ ہاتھ لے کر عمر بھر چلتا رہا

ایک آنسو یاد کا ٹپکا تو دریا بن گیا
زندگی بھر مجھ میں ایک طوفان سا پلتا رہا

جانتی ہوں اب اسے میں پا نہیں سکتی مگر
ہر جگہ سائے کی صورت ساتھ کیوں چلتا رہا

جو میری نظروں سے اوجھل ہو چکا مدت ہوئی
وہ خیالوں میں بسا اور شعر میں ڈھلتا رہا

رنج تھا گلنارؔ مجھ کو اس کو بھی افسوس تھا
دیر تک روتا رہا اور ہاتھ بھی ملتا رہا

Facebook Comments


escort istanbul
mersin escort bayan
berlin callgirls