woh ankhen jin se mulaqaat ik bahana sun-hwa
inhen khabar hi nahi kon kab nishana sun-hwa

sitara sehri ka bharosa mat kiijo
naye safar mein yeh rakhat safar purana sun-hwa

nah jaaney kon si aatish mein jal bujhe hum tum
yahan to jo bhi sun-hwa hai dron khanah sun-hwa

kuch is terhan se woh shaamil sun-hwa kahani mein
ke is ke baad jo kirdaar tha fasana sun-hwa

isi setaaray ne bhatka diya sir manzil
safar pay jo meri tehweel mein rawana sun-hwa

suna hai tujh ko to hum yaad bhi nahi atay
yeh imteha to nahi yeh to aazmana sun-hwa

hamein to ishhq muqaddar hai jaisay rizaq ‘Saleem’
so chal parrin ge jahan apna aabb o dana sun-hwa

وہ آنکھیں جن سے ملاقات اک بہانہ ہوا
انہیں خبر ہی نہیں کون کب نشانہ ہوا

ستارۂ سحری کا بھروسہ مت کیجو
نئے سفر میں یہ رخت سفر پرانا ہوا

نہ جانے کون سی آتش میں جل بجھے ہم تم
یہاں تو جو بھی ہوا ہے درون خانہ ہوا

کچھ اس طرح سے وہ شامل ہوا کہانی میں
کہ اس کے بعد جو کردار تھا فسانہ ہوا

اسی ستارے نے بھٹکا دیا سر منزل
سفر پہ جو مری تحویل میں روانہ ہوا

سنا ہے تجھ کو تو ہم یاد بھی نہیں آتے
یہ امتحاں تو نہیں یہ تو آزمانا ہوا

ہمیں تو عشق مقدر ہے جیسے رزق سلیمؔ
سو چل پڑیں گے جہاں اپنا آب و دانہ ہوا

Facebook Comments