tum ne sach bolnay ki jurrat ki
yeh bhi tauheen hai adalat ki

manzilain raastoon ki dhool huien
puchhte kya ho tum masafat ki

apna zaad safar bhi chore gay
jany walon ne kitni ujlat ki

mein jahan qatal ho raha hon wahan
mere ajdaad ne hukoomat ki

pehlay mujh se judda sun-hwa aur phir
aks ne aaiine se hijrat ki

meri aankhon pay is ne haath rakha
aur ik khawab ki mhort ki

itna mushkil nahi tujhe paana
ik gharri chahiye hai fursat ki

hum ne to khud se intiqam liya
tum ne kya soch kar mohabbat ki

kon kis ke liye tabah sun-hwa
kya zaroorat hai is wazahat ki

ishhq jis se nah ho saka is ne
shairi mein ajab siyasat ki

yaad aayi to hai shanakht magar
intahaa ho gayi hai ghaflat ki

hum wahan pehlay reh chuke hain ‘saliim’
tum ne jis dil mein ab sukoonat ki

تم نے سچ بولنے کی جرأت کی
یہ بھی توہین ہے عدالت کی

منزلیں راستوں کی دھول ہوئیں
پوچھتے کیا ہو تم مسافت کی

اپنا زاد سفر بھی چھوڑ گئے
جانے والوں نے کتنی عجلت کی

میں جہاں قتل ہو رہا ہوں وہاں
میرے اجداد نے حکومت کی

پہلے مجھ سے جدا ہوا اور پھر
عکس نے آئینے سے ہجرت کی

میری آنکھوں پہ اس نے ہاتھ رکھا
اور اک خواب کی مہورت کی

اتنا مشکل نہیں تجھے پانا
اک گھڑی چاہیئے ہے فرصت کی

ہم نے تو خود سے انتقام لیا
تم نے کیا سوچ کر محبت کی

کون کس کے لیے تباہ ہوا
کیا ضرورت ہے اس وضاحت کی

عشق جس سے نہ ہو سکا اس نے
شاعری میں عجب سیاست کی

یاد آئی تو ہے شناخت مگر
انتہا ہو گئی ہے غفلت کی

ہم وہاں پہلے رہ چکے ہیں سلیمؔ
تم نے جس دل میں اب سکونت کی

Facebook Comments