tujh se barh kar koi pyara bhi nahi ho sakta
par tra sath gawara bhi nahi ho sakta

rasta bhi ghalat ho sakta hai manzil bhi ghalat
har sitaara to sitaara bhi nahi ho sakta

paon rakhtay hi phisal sakta hai matti ho ke rait
har kinara to kinara bhi nahi ho sakta

is tak aawaz p_hnchni bhi barri mushkil hai
aur nah dekhe to ishara bhi nahi ho sakta

tairay bundon ki maeeshat ka ajab haal sun-hwa
aish kaisa ke guzaraa bhi nahi ho sakta

apna dushman hi dikhayi nahi deta ho jisay
aisa lashkar to saf aara bhi nahi ho sakta

pehlay hi lazzat inkaar se waaqif nahi jo
is se inkaar dobarah bhi nahi ho sakta

husn aisa ke chuka chond hui hain ankhen
herat aisi ke nazara bhi nahi ho sakta

chlye woh shakhs hamara to kabhi tha hi nahi
dukh to yeh hai ke tumhara bhi nahi ho sakta

duniya achi bhi nahi lagti hum aison ko ‘saliim’
aur duniya se kinara bhi nahi ho sakta

تجھ سے بڑھ کر کوئی پیارا بھی نہیں ہو سکتا
پر ترا ساتھ گوارا بھی نہیں ہو سکتا

راستہ بھی غلط ہو سکتا ہے منزل بھی غلط
ہر ستارا تو ستارا بھی نہیں ہو سکتا

پاؤں رکھتے ہی پھسل سکتا ہے مٹی ہو کہ ریت
ہر کنارا تو کنارا بھی نہیں ہو سکتا

اس تک آواز پہنچنی بھی بڑی مشکل ہے
اور نہ دیکھے تو اشارہ بھی نہیں ہو سکتا

تیرے بندوں کی معیشت کا عجب حال ہوا
عیش کیسا کہ گزارا بھی نہیں ہو سکتا

اپنا دشمن ہی دکھائی نہیں دیتا ہو جسے
ایسا لشکر تو صف آرا بھی نہیں ہو سکتا

پہلے ہی لذت انکار سے واقف نہیں جو
اس سے انکار دوبارہ بھی نہیں ہو سکتا

حسن ایسا کہ چکا چوند ہوئی ہیں آنکھیں
حیرت ایسی کہ نظارا بھی نہیں ہو سکتا

چلئے وہ شخص ہمارا تو کبھی تھا ہی نہیں
دکھ تو یہ ہے کہ تمہارا بھی نہیں ہو سکتا

دنیا اچھی بھی نہیں لگتی ہم ایسوں کو سلیمؔ
اور دنیا سے کنارا بھی نہیں ہو سکتا

Facebook Comments