tre anay ke hain jo aasrey sonay nahi dete
hamein khush fehmiyon ke silsilay sonay nahi dete

mohabbat se hamein to nay palat kar kyun nahi dekha
tri badli nazar ke zawiye sonay nahi dete

woh rehta be wafa lekin nazar ke samnay rehta
nazar se daur hai to faaslay sonay nahi dete

nah jany khauf ki parchaiyan kaisi musallat hain
ke andeshon ke hum ko Azdahy sonay nahi dete

saraye mein thehr kar bhi hamein to jagna hoga
rawana honay walay qaafley sonay nahi dete

har aahat pay guma hota hai tairay lout anay ka
nahi hai aas lekin hauslay sonay nahi dete

‘qamar’ mein raat bhar jagoon to hai is mein taajjub kya
chamaknay ke takazey hi mujhe sonay nahi dete

ترے آنے کے ہیں جو آسرے سونے نہیں دیتے
ہمیں خوش فہمیوں کے سلسلے سونے نہیں دیتے

محبت سے ہمیں تو نے پلٹ کر کیوں نہیں دیکھا
تری بدلی نظر کے زاویے سونے نہیں دیتے

وہ رہتا بے وفا لیکن نظر کے سامنے رہتا
نظر سے دور ہے تو فاصلے سونے نہیں دیتے

نہ جانے خوف کی پرچھائیاں کیسی مسلط ہیں
کہ اندیشوں کے ہم کو اژدہے سونے نہیں دیتے

سرائے میں ٹھہر کر بھی ہمیں تو جاگنا ہوگا
روانہ ہونے والے قافلے سونے نہیں دیتے

ہر آہٹ پہ گماں ہوتا ہے تیرے لوٹ آنے کا
نہیں ہے آس لیکن حوصلے سونے نہیں دیتے

قمرؔ میں رات بھر جاگوں تو ہے اس میں تعجب کیا
چمکنے کے تقاضے ہی مجھے سونے نہیں دیتے

Facebook Comments


escort istanbul
mersin escort bayan
berlin callgirls