c
woh jalva gaah tre khakdaan se daur nahi

woh marghzaar ke beam khizaa nahi jis mein
ghameen nah ho ke tre aashyaan se daur nahi

yeh hai khulasa ilm qlndri ke hayaat
Khadang jastah hai lekin kaman se daur nahi

fiza tri Meh-o-parvin se hai zara agay
qadam utha yeh maqam aasmaa se daur nahi

kahe nah rahnma se ke chore day mujh ko
yeh baat raah-rav-e-nukta-daan se daur nahi

تو اے اسیر مکاں لا مکاں سے دور نہیں
وہ جلوہ گاہ ترے خاکداں سے دور نہیں

وہ مرغزار کہ بیم خزاں نہیں جس میں
غمیں نہ ہو کہ ترے آشیاں سے دور نہیں

یہ ہے خلاصۂ علم قلندری کہ حیات
خدنگ جستہ ہے لیکن کماں سے دور نہیں

فضا تری مہ و پرویں سے ہے ذرا آگے
قدم اٹھا یہ مقام آسماں سے دور نہیں

کہے نہ راہنما سے کہ چھوڑ دے مجھ کو
یہ بات راہرو نکتہ داں سے دور نہیں

Facebook Comments


escort istanbul
mersin escort bayan
berlin callgirls