Sooraj ko niklana hai so niklay ga dobaara
ab dekhieye kab dobta hai subah ka tara

maghrib mein jo duube usay mashriq hi nikalay
mein khoob samjhta hon Mushiyat ka ishara

parhta hon jab is ko to Sana karta hon rab ki
ensaan ka chehra hai ke quran ka Parah

jee haar ke tum paar nah kar pao nadi bhi
waisay to samandar ka bhi hota hai kinara

jannat mili jhuuton ko agar jhoot ke badlay
schon ko saza mein hai jahannum bhi gawara

yeh kon sa insaaf hai ae arsh-nashiino
bijli jo tumhari hai to Khirmen hai hamara

mustaqbil ensaan naay elaan kya hai
aindah se be taaj rahay ga sir Dara

سورج کو نکلنا ہے سو نکلے گا دوبارا
اب دیکھیے کب ڈوبتا ہے صبح کا تارا

مغرب میں جو ڈوبے اسے مشرق ہی نکالے
میں خوب سمجھتا ہوں مشیت کا اشارا

پڑھتا ہوں جب اس کو تو ثنا کرتا ہوں رب کی
انسان کا چہرہ ہے کہ قرآن کا پارہ

جی ہار کے تم پار نہ کر پاؤ ندی بھی
ویسے تو سمندر کا بھی ہوتا ہے کنارا

جنت ملی جھوٹوں کو اگر جھوٹ کے بدلے
سچوں کو سزا میں ہے جہنم بھی گوارا

یہ کون سا انصاف ہے اے عرش نشینو
بجلی جو تمہاری ہے تو خرمن ہے ہمارا

مستقبل انسان نے اعلان کیا ہے
آئندہ سے بے تاج رہے گا سر دارا

Facebook Comments


escort istanbul
mersin escort bayan
berlin callgirls