shayad abhi kami si masihaiyon mein hai
jo dard hai woh rooh ki gehraion mein hai

jis ko kabhi khayaal ka paiker nah mil saka
woh aks mere zehan ki ranaiyon mein hai

kal taq to zindagi thi tamasha bani hui
aur aaj zindagi bhi tamashaiyon mein hai

hai kis liye yeh wusat Daman iltifaat
dil ka sukoon to unhi tanhaiyoon mein hai

yeh dasht arzoo hai yahan aik aik dil
tujh ko khabar bhi hai tre saudaiyon mein hai

tanha nahi hai ae shab giryaan dyie ki lo
yadoon ki aik shaam bhi parchaiyun mein hai

‘gulnaar’ Maslehat ki zuba mein nah baat kar
woh zeher pi ke dekh jo sachaiyon mein hai

شاید ابھی کمی سی مسیحائیوں میں ہے
جو درد ہے وہ روح کی گہرائیوں میں ہے

جس کو کبھی خیال کا پیکر نہ مل سکا
وہ عکس میرے ذہن کی رعنائیوں میں ہے

کل تک تو زندگی تھی تماشا بنی ہوئی
اور آج زندگی بھی تماشائیوں میں ہے

ہے کس لیے یہ وسعت دامان التفات
دل کا سکون تو انہی تنہائیوں میں ہے

یہ دشت آرزو ہے یہاں ایک ایک دل
تجھ کو خبر بھی ہے ترے سودائیوں میں ہے

تنہا نہیں ہے اے شب گریاں دئیے کی لو
یادوں کی ایک شام بھی پرچھائیوں میں ہے

گلنارؔ مصلحت کی زباں میں نہ بات کر
وہ زہر پی کے دیکھ جو سچائیوں میں ہے

Facebook Comments