safar to khatam dard ka kisi parao mein nahi
jo naqsh khil chuke hain sab kisi sabhao mein nahi

hai dil mein aag jo jali abhi talak nahi bujhi
yeh shiddatain to aanch ki kisi alaao mein nahi

musaftain dil o nigah ki to paanion pay khatam hain
ke ishhq ki yeh vahdaten kisi bahao mein nahi

hain mehv raqs zindagi ke zawiye tabah kin
yeh manzilain woh rastay kisi banaao mein nahi

hain dil lagi ke khail ke kuch aur bhi to silsilay
gulaal qurb o wasal ka faqat lagao mein nahi

woh koi fard khaas hai jo aaj ihtimaam hai
yeh sir bah sir sajaavaten to rakh rakhao mein nahi

kuch aur hi tha shoq woh jo paar le ke chal diya
bhanwar mein aisay tairna yeh seekh nao mein nahi

سفر تو ختم درد کا کسی پڑاؤ میں نہیں
جو نقش کھل چکے ہیں سب کسی سبھاؤ میں نہیں

ہے دل میں آگ جو جلی ابھی تلک نہیں بجھی
یہ شدتیں تو آنچ کی کسی الاؤ میں نہیں

مسافتیں دل و نگاہ کی تو پانیوں پہ ختم ہیں
کہ عشق کی یہ وحدتیں کسی بہاؤ میں نہیں

ہیں محو رقص زندگی کے زاویے تباہ کن
یہ منزلیں وہ راستے کسی بناؤ میں نہیں

ہیں دل لگی کے کھیل کے کچھ اور بھی تو سلسلے
گلال قرب و وصل کا فقط لگاؤ میں نہیں

وہ کوئی فرد خاص ہے جو آج اہتمام ہے
یہ سر بہ سر سجاوٹیں تو رکھ رکھاؤ میں نہیں

کچھ اور ہی تھا شوق وہ جو پار لے کے چل دیا
بھنور میں ایسے تیرنا یہ سیکھ ناؤ میں نہیں

Facebook Comments


escort istanbul
mersin escort bayan
berlin callgirls