mra ghuroor tujhay kho ke haar maan gaya
mein chout kha ke magar apni qader jaan gaya

kahin ufaq nah mila meri dasht gardi ko
mein teri dhun mein bhari kaeenat chhaan gaya

kkhuda ke baad to be intahaa andhera hai
tri talabb mein kahan taq nah mera dheyaan gaya

jabeen pay bil bhi nah aata ganwaa ke dono jahan
jo to chhana to mein apni shikast maan gaya

bdalty rang they teri umang ke ghammaz
to mujh se bitchrha to mein tera raaz jaan gaya

khud –apne aap se mein shikwah sanj aaj bhi hon
‘nadiim’ yun to mujhe ik Jahan maan gaya

مرا غرور تجھے کھو کے ہار مان گیا
میں چوٹ کھا کے مگر اپنی قدر جان گیا

کہیں افق نہ ملا میری دشت گردی کو
میں تیری دھن میں بھری کائنات چھان گیا

خدا کے بعد تو بے انتہا اندھیرا ہے
تری طلب میں کہاں تک نہ میرا دھیان گیا

جبیں پہ بل بھی نہ آتا گنوا کے دونوں جہاں
جو تو چھنا تو میں اپنی شکست مان گیا

بدلتے رنگ تھے تیری امنگ کے غماز
تو مجھ سے بچھڑا تو میں تیرا راز جان گیا

خود اپنے آپ سے میں شکوہ سنج آج بھی ہوں
ندیمؔ یوں تو مجھے اک جہان مان گیا

Facebook Comments