milna nah milna aik bahana hai aur bas
tum sach ho baqi jo hai fasana hai aur bas

logon ko rastay ki zaroorat hai aur mujhe
ik sang reh guzar ko hatana hai aur bas

masrufiyat ziyada nahi hai meri yahan
matti se ik chairag banana hai aur bas

soye hue to jaag hi jayen ge aik din
jo jagtay hain un ko jagana hai aur bas

tum woh nahi ho jin se wafa ki umeed hai
tum se meri morad zamana hai aur bas

phoolon ko dhoondata sun-hwa phirta hon baagh mein
baad Saba ko kaam dilana hai aur bas

aabb o sun-hwa to yun bhi mra masla nahi
mujh ko to ik darakht lagana hai aur bas

neendon ka ruut jagon se ulajhna yun hi nahi
ik khawab raaygan ko bachana hai aur bas

ik wada jo kya hi nahi hai abhi ‘saliim’
mujh ko wohi to wada nibhana hai aur bas

ملنا نہ ملنا ایک بہانہ ہے اور بس
تم سچ ہو باقی جو ہے فسانہ ہے اور بس

لوگوں کو راستے کی ضرورت ہے اور مجھے
اک سنگ رہ گزر کو ہٹانا ہے اور بس

مصروفیت زیادہ نہیں ہے مری یہاں
مٹی سے اک چراغ بنانا ہے اور بس

سوئے ہوئے تو جاگ ہی جائیں گے ایک دن
جو جاگتے ہیں ان کو جگانا ہے اور بس

تم وہ نہیں ہو جن سے وفا کی امید ہے
تم سے مری مراد زمانہ ہے اور بس

پھولوں کو ڈھونڈتا ہوا پھرتا ہوں باغ میں
باد صبا کو کام دلانا ہے اور بس

آب و ہوا تو یوں بھی مرا مسئلہ نہیں
مجھ کو تو اک درخت لگانا ہے اور بس

نیندوں کا رت جگوں سے الجھنا یوں ہی نہیں
اک خواب رائیگاں کو بچانا ہے اور بس

اک وعدہ جو کیا ہی نہیں ہے ابھی سلیمؔ
مجھ کو وہی تو وعدہ نبھانا ہے اور بس

Facebook Comments