Mile Ga Manzil-e-Maqsood Ka Ussi Ko Suragh
Andheri Shab Mein Hai Cheete Ki Ankh Jis Ka Charagh

Mayassar Ati Hai Fursat Faqt Ghulamon Ko
Nahin Hai Banda-e-Hur Ke Liye Jahan Mein Faragh

Farogh-e-Mueez Byan Kheerah Kar Raha Hai Tujhe
Teri Nazar Ka Nigehban Ho Sahib-e-‘Ma Zagh’

Woh Bazm-e-Aysh Hai Mehman Ak Nafas Do Nafas
Chamak Rahe Hain Misal-e-Sitara Jis Ke Ayagh

Kiya Hai Tujh Ko Kitabon Ne Kaur Zauq Itna
Saba Se Bhi Na Mila Tujh Ko Booye Gul Ka Suragh!

ملے گا منزل مقصود کا اسي کو سراغ
اندھيري شب ميں ہے چيتے کي آنکھ جس کا چراغ

ميسر آتي ہے فرصت فقط غلاموں کو
نہيں ہے بندہ حر کے ليے جہاں ميں فراغ

فروغ مغربياں خيرہ کر رہا ہے تجھے
تري نظر کا نگہباں ہو صاحب ‘مازاغ’

وہ بزم عيش ہے مہمان يک نفس دو نفس
چمک رہے ہيں مثال ستارہ جس کے اياغ

کيا ہے تجھ کو کتابوں نے کور ذوق اتنا
صبا سے بھي نہ ملا تجھ کو بوئے گل کا سراغ

Facebook Comments


escort istanbul
mersin escort bayan
berlin callgirls