mein khayaal hon kisi aur ka mujhe sochta koi aur hai
sir aaina mra aks hai pas aaina koi aur hai

mein kisi ke dast talabb mein hon to kisi ke harf dua mein hon
mein naseeb hon kisi aur ka mujhe mangta koi aur hai

ajab aitbaar o be aitbaari ke darmain hai zindagi
mein qareeb hon kisi aur ke mujhe jaanta koi aur hai

meri roshni tre khad o khhaal se mukhtalif to nahi magar
to qareeb aa tujhaye dekh lon to wohi hai ya koi aur hai

tujhaye dushmanon ki khabar nah thi mujhe doston ka pata nahi
tri dastan koi aur thi mra waqea koi aur hai

wohi munsifon ki rivaytain wohi faislon ki ibartain
mra jurm to koi aur tha pay meri saza koi aur hai

kabhi lout ayen to poochna nahi dekhna inhen ghhor se
jinhein rastay mein khabar hui ke yeh rasta koi aur hai

jo meri riyazat name shab ko ‘saliim’ subah nah mil saki
to phir is ke maienay to yeh hue ke yahan kkhuda koi aur hai

میں خیال ہوں کسی اور کا مجھے سوچتا کوئی اور ہے
سر آئینہ مرا عکس ہے پس آئینہ کوئی اور ہے

میں کسی کے دست طلب میں ہوں تو کسی کے حرف دعا میں ہوں
میں نصیب ہوں کسی اور کا مجھے مانگتا کوئی اور ہے

عجب اعتبار و بے اعتباری کے درمیان ہے زندگی
میں قریب ہوں کسی اور کے مجھے جانتا کوئی اور ہے

مری روشنی ترے خد و خال سے مختلف تو نہیں مگر
تو قریب آ تجھے دیکھ لوں تو وہی ہے یا کوئی اور ہے

تجھے دشمنوں کی خبر نہ تھی مجھے دوستوں کا پتا نہیں
تری داستاں کوئی اور تھی مرا واقعہ کوئی اور ہے

وہی منصفوں کی روایتیں وہی فیصلوں کی عبارتیں
مرا جرم تو کوئی اور تھا پہ مری سزا کوئی اور ہے

کبھی لوٹ آئیں تو پوچھنا نہیں دیکھنا انہیں غور سے
جنہیں راستے میں خبر ہوئی کہ یہ راستہ کوئی اور ہے

جو مری ریاضت نیم شب کو سلیمؔ صبح نہ مل سکی
تو پھر اس کے معنی تو یہ ہوئے کہ یہاں خدا کوئی اور ہے

Facebook Comments