mein chup raha ke zeher yahi mujh ko raas tha
woh sang lafz pheink ke kitna udaas tha

aksar meri quba pay hansi aa gayi jisay
kal mil gaya to woh bhi dareeda libaas tha

mein Dhundhtaa tha daur khalaon mein aik jism
cheharon ka ik hajhoom maray aas paas tha

tum khush they patharon ko kkhuda jaan ke magar
mujh ko yaqeen hai woh tumhara qiyaas tha

bakhsha hai jis ny rooh ko zakhamo ka perhan
‘mohsin’ woh shakhs kitna tabiyat shanaas tha

میں چپ رہا کہ زہر یہی مجھ کو راس تھا
وہ سنگ لفظ پھینک کے کتنا اداس تھا

اکثر مری قبا پہ ہنسی آ گئی جسے
کل مل گیا تو وہ بھی دریدہ لباس تھا

میں ڈھونڈھتا تھا دور خلاؤں میں ایک جسم
چہروں کا اک ہجوم مرے آس پاس تھا

تم خوش تھے پتھروں کو خدا جان کے مگر
مجھ کو یقین ہے وہ تمہارا قیاس تھا

بخشا ہے جس نے روح کو زخموں کا پیرہن
محسنؔ وہ شخص کتنا طبیعت شناس تھا

Facebook Comments


escort istanbul
mersin escort bayan
berlin callgirls