majnu ny shehar chorra to sehraa bhi chore day
nazare ki hawas ho to laila bhi chore day

waiz kamaal tark se millti hai yaan morad
duniya jo chore di hai to uqbi bhi chore day

taqleed ki rawish se to behtar hai khudkushi
rasta bhi dhoond khizar ka soda bhi chore day

manind Khamah teri zuba par hai harf ghair
begana shai pay nazish be ja bhi chore day

lutaf kalaam kya jo nah ho dil mein dard ishhq
bismal nahi hai to to tarapna bhi chore day

shabnam ki terhan phoolon pay ro aur chaman se chal
is baagh mein qiyam ka soda bhi chore day

hai aashiqii mein rasam allag sab se baithna
buut khanah bhi haram bhi kaleesa bhi chore day

sodagari nahi yeh ibadat kkhuda ki hai
ae be khabar jaza ki tamanna bhi chore day

achha hai dil ke sath rahay Pasban aqal
lekin kabhi kabhi usay tanha bhi chore day

jeena woh kya jo ho nafs ghair par madaar
shohrat ki zindagi ka bhrosa bhi chore day

shokhi si hai sawal mukarrar mein ae claim
shart Raza yeh hai ke taqaza bhi chore day

waiz saboot laaye jo me ke juwaz mein
‘iqbaal’ ko yeh zid hai ke piinaa bhi chore day

مجنوں نے شہر چھوڑا تو صحرا بھی چھوڑ دے
نظارے کی ہوس ہو تو لیلیٰ بھی چھوڑ دے

واعظ کمال ترک سے ملتی ہے یاں مراد
دنیا جو چھوڑ دی ہے تو عقبیٰ بھی چھوڑ دے

تقلید کی روش سے تو بہتر ہے خودکشی
رستہ بھی ڈھونڈ خضر کا سودا بھی چھوڑ دے

مانند خامہ تیری زباں پر ہے حرف غیر
بیگانہ شے پہ نازش بے جا بھی چھوڑ دے

لطف کلام کیا جو نہ ہو دل میں درد عشق
بسمل نہیں ہے تو تو تڑپنا بھی چھوڑ دے

شبنم کی طرح پھولوں پہ رو اور چمن سے چل
اس باغ میں قیام کا سودا بھی چھوڑ دے

ہے عاشقی میں رسم الگ سب سے بیٹھنا
بت خانہ بھی حرم بھی کلیسا بھی چھوڑ دے

سوداگری نہیں یہ عبادت خدا کی ہے
اے بے خبر جزا کی تمنا بھی چھوڑ دے

اچھا ہے دل کے ساتھ رہے پاسبان عقل
لیکن کبھی کبھی اسے تنہا بھی چھوڑ دے

جینا وہ کیا جو ہو نفس غیر پر مدار
شہرت کی زندگی کا بھروسا بھی چھوڑ دے

شوخی سی ہے سوال مکرر میں اے کلیم
شرط رضا یہ ہے کہ تقاضا بھی چھوڑ دے

واعظ ثبوت لائے جو مے کے جواز میں
اقبالؔ کو یہ ضد ہے کہ پینا بھی چھوڑ دے

Facebook Comments


escort istanbul
mersin escort bayan
berlin callgirls