kyun hijar ke shikway karta hai kyun dard ke ronay rota hai
ab ishhq kya to sabr bhi kar is mein to yahi kuch hota hai

aaghaz museebat hota hai –apne hi dil ki shamat se
aankhon mein phool khelata hai talwon mein kantay bota hai

ahbaab ka shikwah kya kijiyej khud zahir o batin aik nahi
lab oopar oopar hanstay hain dil andar andar rota hai

mallaahon ko ilzaam nah do tum saahil walay kya jano
yeh tufaan kon uthata hai yeh kashti kon dubota hai

kya jaaniye yeh kya khoye ga kya janye yeh kya paye ga
mandir ka pujari jaagta hai masjid ka namazi sota hai

khairaat ki jannat thukra day hai shaan yahi khuddari ki
jannat se nikala tha jis ko to is aadam ka pota hai

کیوں ہجر کے شکوے کرتا ہے کیوں درد کے رونے روتا ہے
اب عشق کیا تو صبر بھی کر اس میں تو یہی کچھ ہوتا ہے

آغاز مصیبت ہوتا ہے اپنے ہی دل کی شامت سے
آنکھوں میں پھول کھلاتا ہے تلووں میں کانٹے بوتا ہے

احباب کا شکوہ کیا کیجئے خود ظاہر و باطن ایک نہیں
لب اوپر اوپر ہنستے ہیں دل اندر اندر روتا ہے

ملاحوں کو الزام نہ دو تم ساحل والے کیا جانو
یہ طوفاں کون اٹھاتا ہے یہ کشتی کون ڈبوتا ہے

کیا جانیے یہ کیا کھوئے گا کیا جانئے یہ کیا پائے گا
مندر کا پجاری جاگتا ہے مسجد کا نمازی سوتا ہے

خیرات کی جنت ٹھکرا دے ہے شان یہی خودداری کی
جنت سے نکالا تھا جس کو تو اس آدم کا پوتا ہے

Facebook Comments


escort istanbul
mersin escort bayan
berlin callgirls