kya zurori hai ab yeh batana mera
tutti shaakh par tha thikana mera

gham nahi ab mili hain jo tanhaiiyan
anjuman anjuman tha fasana mera

jo bhi aaya hadaf par woh kab bach saka
chokta hi nahi tha nishana mera

ik zamana kabhi tha mra hum nawa
tum ne dekha kahan woh zamana mera

arz bhopal se tha talluq kabhi
ab to sab kuch hai yeh larkana mera

natwani pay meri jo hain Khanda zan
un ko albm purana dikhnana mera

mere jany se behtar hai ‘mohsin’ kabhi
bazm shair o sukhan mein nah jana mera

کیا ضروری ہے اب یہ بتانا مرا
ٹوٹتی شاخ پر تھا ٹھکانا مرا

غم نہیں اب ملی ہیں جو تنہائیاں
انجمن انجمن تھا فسانہ مرا

جو بھی آیا ہدف پر وہ کب بچ سکا
چوکتا ہی نہیں تھا نشانہ مرا

اک زمانہ کبھی تھا مرا ہم نوا
تم نے دیکھا کہاں وہ زمانہ مرا

ارض بھوپال سے تھا تعلق کبھی
اب تو سب کچھ ہے یہ لاڑکانہ مرا

ناتوانی پہ میری جو ہیں خندہ زن
ان کو البم پرانا دکھانا مرا

میرے جانے سے بہتر ہے محسنؔ کبھی
بزم شعر و سخن میں نہ جانا مرا

Facebook Comments


escort istanbul
mersin escort bayan
berlin callgirls