kurbateen hotay hue bhi fasloon mein qaid hain
kitni azaadi se hum apni hado mein qaid hain

kon si aankhon mein mere khawab roshan hain abhi
kis ki neendain hain jo mere ratjagoon mein qaid hain

shehar abadi se khaali ho gay khusbhoo se phool
aur kitni khuwaishe hain jo dilon mein qaid hain

paon mein rishton ki zanjeeren hain dil mein khauf ki
aisa lagta hai ke hum –apne gharon mein qaid hain

yeh zamee yun hi sukarti jaye gi aur aik din
phail jayen ge jo tufaan sahilon mein qaid hain

is jazeeray par azal se khaak oodati hai sun-hwa
manzlon ke bhaid phir bhi raastoon mein qaid hain

kon yeh pataal se ubhra kinare par ‘saliim’
serphiri moajain abhi taq dairon mein qaid hain

قربتیں ہوتے ہوئے بھی فاصلوں میں قید ہیں
کتنی آزادی سے ہم اپنی حدوں میں قید ہیں

کون سی آنکھوں میں میرے خواب روشن ہیں ابھی
کس کی نیندیں ہیں جو میرے رتجگوں میں قید ہیں

شہر آبادی سے خالی ہو گئے خوشبو سے پھول
اور کتنی خواہشیں ہیں جو دلوں میں قید ہیں

پاؤں میں رشتوں کی زنجیریں ہیں دل میں خوف کی
ایسا لگتا ہے کہ ہم اپنے گھروں میں قید ہیں

یہ زمیں یوں ہی سکڑتی جائے گی اور ایک دن
پھیل جائیں گے جو طوفاں ساحلوں میں قید ہیں

اس جزیرے پر ازل سے خاک اڑتی ہے ہوا
منزلوں کے بھید پھر بھی راستوں میں قید ہیں

کون یہ پاتال سے ابھرا کنارے پر سلیمؔ
سرپھری موجیں ابھی تک دائروں میں قید ہیں

Facebook Comments