koi hungama sir bazm uthaya jaye
kuch kya jaye charaghoon ko bujhaaya jaye

bhoolna khud ko to aasan hai bhala betha hon
woh sitam gir jo nah bhoolay se bhulaya jaye

jis ke baais hain yeh chehray ki lakerain maghmoom
Gair-mumkin hai ke manzar woh dekhaya jaye

shaam khamosh hai aur chaand nikal aaya hai
kyun nah ik naqsh hi pani pay banaya jaye

zakham hanstay hain to yeh fasal bahhar aati hai
haan isi baat pay phir zakham lagaya jaye

کوئی ہنگامہ سر بزم اٹھایا جائے
کچھ کیا جائے چراغوں کو بجھایا جائے

بھولنا خود کو تو آساں ہے بھلا بیٹھا ہوں
وہ ستم گر جو نہ بھولے سے بھلایا جائے

جس کے باعث ہیں یہ چہرے کی لکیریں مغموم
غیرممکن ہے کہ منظر وہ دکھایا جائے

شام خاموش ہے اور چاند نکل آیا ہے
کیوں نہ اک نقش ہی پانی پہ بنایا جائے

زخم ہنستے ہیں تو یہ فصل بہار آتی ہے
ہاں اسی بات پہ پھر زخم لگایا جائے

Facebook Comments


escort istanbul
mersin escort bayan
berlin callgirls