koi charah nahi dua ke siwa
koi santa nahi kkhuda ke siwa

mujh se kya ho saka wafa ke siwa
mujh ko milta bhi kya saza ke siwa

brsr saahil morad yahan
koi ubhra hai nakhuda ke siwa

koi bhi to dikhao manzil par
jis ko dekha ho reh numa ke siwa

dil sabhi kuch zabaan par laya
ik faqat arz mudda ke siwa

koi raazi nah reh saka mujh se
mere Allah tri Raza ke siwa

buut kade se chalay ho kaabay ko
kya miley ga tumhe kkhuda ke siwa

doston ke yeh mukhlisana teer
kuch nahi meri hi khata ke siwa

mohar o Meh se buland ho kar bhi
nazar aaya nah kuch khalaa ke siwa

ae ‘hafiiz’ aah aah par aakhir
kya kahin dost wah wa ke siwa

کوئی چارہ نہیں دعا کے سوا
کوئی سنتا نہیں خدا کے سوا

مجھ سے کیا ہو سکا وفا کے سوا
مجھ کو ملتا بھی کیا سزا کے سوا

برسر ساحل مراد یہاں
کوئی ابھرا ہے ناخدا کے سوا

کوئی بھی تو دکھاؤ منزل پر
جس کو دیکھا ہو رہ نما کے سوا

دل سبھی کچھ زبان پر لایا
اک فقط عرض مدعا کے سوا

کوئی راضی نہ رہ سکا مجھ سے
میرے اللہ تری رضا کے سوا

بت کدے سے چلے ہو کعبے کو
کیا ملے گا تمہیں خدا کے سوا

دوستوں کے یہ مخلصانہ تیر
کچھ نہیں میری ہی خطا کے سوا

مہر و مہ سے بلند ہو کر بھی
نظر آیا نہ کچھ خلا کے سوا

اے حفیظؔ آہ آہ پر آخر
کیا کہیں دوست واہ وا کے سوا

Facebook Comments


escort istanbul
mersin escort bayan
berlin callgirls