khiirad mandoon se kya pouchon ke meri ibtida kya hai
ke mein is fikar mein rehta hon meri intahaa kya hai

khudi ko kar buland itna ke har taqdeer se pehlay
kkhuda bande se khud pouchye bta teri Raza kya hai

maqam guftagu kya hai agar mein chemiya gir hon
yahi soaz nafs hai aur meri chemiya kya hai

nazar ayen mujhe taqdeer ki gahrayiaan is mein
nah pooch ae hum nashen mujh se woh chasham surma sa kya hai

agar hota woh mjzob farangi is zamane mein
to ‘iqbaal’ is ko samajhata maqam kibriya kya hai

nwaye subah gaahi ny jigar khoo kar diya mera
khudaya jis khata ki yeh saza hai woh khata kya hai

خرد مندوں سے کیا پوچھوں کہ میری ابتدا کیا ہے
کہ میں اس فکر میں رہتا ہوں میری انتہا کیا ہے

خودی کو کر بلند اتنا کہ ہر تقدیر سے پہلے
خدا بندے سے خود پوچھے بتا تیری رضا کیا ہے

مقام گفتگو کیا ہے اگر میں کیمیا گر ہوں
یہی سوز نفس ہے اور میری کیمیا کیا ہے

نظر آئیں مجھے تقدیر کی گہرائیاں اس میں
نہ پوچھ اے ہم نشیں مجھ سے وہ چشم سرمہ سا کیا ہے

اگر ہوتا وہ مجذوب فرنگی اس زمانے میں
تو اقبالؔ اس کو سمجھاتا مقام کبریا کیا ہے

نوائے صبح گاہی نے جگر خوں کر دیا میرا
خدایا جس خطا کی یہ سزا ہے وہ خطا کیا ہے

Facebook Comments