jachti nahi kuch Shahi o amlaak nazar mein
hain mohar o Meh o Anjum o aflaaq nazar mein

ik soaz zandaanon gir hai tri aankhh mein panhan
hai dil ke liye shoq ka fitraak nazar mein

kya khoob ke kashkaul faqeeri se hai aaya
ik ganj giran maaya teh khaak nazar mein

ik khawab sehar saaz ka nayaab khazana
daryaft kya hai tri be baak nazar mein

kuch aur kahan chahiye is dil ko ke ab hai
dareaye gham ishhq ka peraak nazar mein

yeh khawab hai sayyad ka ya ik dil wehshi
ubhra hai koi Tair chalaak nazar mein

selaab shaqaavat ke maqabil hai tumahray
yeh fasal mohabbat khas o khashaak nazar mein

khaye hain bohat mouj mukhalif ke thpirhe
rakha hai bohat behar khatar naak nazar mein

malbos mein ‘anjum’ ke hain pewand ke gohar
kyun thahare yeh kamkhawab ki poshak nazar mein

جچتی نہیں کچھ شاہی و املاک نظر میں
ہیں مہر و مہ و انجم و افلاک نظر میں

اک سوز فسوں گر ہے تری آنکھ میں پنہاں
ہے دل کے لئے شوق کا فتراک نظر میں

کیا خوب کہ کشکول فقیری سے ہے آیا
اک گنج گراں مایہ تہ خاک نظر میں

اک خواب سحر ساز کا نایاب خزانہ
دریافت کیا ہے تری بے باک نظر میں

کچھ اور کہاں چاہیے اس دل کو کہ اب ہے
دریائے غم عشق کا پیراک نظر میں

یہ خواب ہے صیاد کا یا اک دل وحشی
ابھرا ہے کوئی طائر چالاک نظر میں

سیلاب شقاوت کے مقابل ہے تمہارے
یہ فصل محبت خس و خاشاک نظر میں

کھائے ہیں بہت موج مخالف کے تھپیڑے
رکھا ہے بہت بحر خطر ناک نظر میں

ملبوس میں انجمؔ کے ہیں پیوند کے گوہر
کیوں ٹھہرے یہ کمخواب کی پوشاک نظر میں

Facebook Comments

شاعر کا مزید کلام



escort istanbul
mersin escort bayan
berlin callgirls