honton pay mohabbat ke fasanay nahi atay
saahil pay samandar ke khazanay nahi atay

palken bhi chamak uthti hain sonay mein hamari
aankhon ko abhi khawab chupaney nahi atay

dil ujri hui aik saraye ki terhan hai
ab log yahan raat jaganay nahi atay

yaro naye mausam nay yeh ahsaan kiye hain
ab yaad mujhe dard puranay nahi atay

urrnay do parindon ko abhi shokh sun-hwa mein
phir lout ke bachpan ke zamane nahi atay

is shehar ke baadal tri zulfon ki terhan hain
yeh aag lagatay hain bujhanay nahi atay

ahbaab bhi gheiron ki ada seekh gaye hain
atay hain magar dil ko dikhaane nahi atay

ہونٹوں پہ محبت کے فسانے نہیں آتے
ساحل پہ سمندر کے خزانے نہیں آتے

پلکیں بھی چمک اٹھتی ہیں سونے میں ہماری
آنکھوں کو ابھی خواب چھپانے نہیں آتے

دل اجڑی ہوئی ایک سرائے کی طرح ہے
اب لوگ یہاں رات جگانے نہیں آتے

یارو نئے موسم نے یہ احسان کیے ہیں
اب یاد مجھے درد پرانے نہیں آتے

اڑنے دو پرندوں کو ابھی شوخ ہوا میں
پھر لوٹ کے بچپن کے زمانے نہیں آتے

اس شہر کے بادل تری زلفوں کی طرح ہیں
یہ آگ لگاتے ہیں بجھانے نہیں آتے

احباب بھی غیروں کی ادا سیکھ گئے ہیں
آتے ہیں مگر دل کو دکھانے نہیں آتے

Facebook Comments


escort istanbul
mersin escort bayan
berlin callgirls