hamaray shoq ki yeh intahaa thi
qadam rakha ke manzil rastaa thi

bhichar ke daar se ban ban phira woh
hiran ko apni kastoori saza thi

kabhi jo khawab tha woh pa liya hai
magar jo kho gayi woh cheez kya thi

mein bachpan mein khilonay torta tha
maray injaam ki woh ibtida thi

mohabbat mar gayi mujh ko bhi gham hai
maray achay dinon ki aashna thi

jisay chhoo lon mein woh ho jaye sona
tujhey dekha to jana bad dua thi

mareez khawab ko to ab Shifa hai
magar duniya barri karvi dawa thi

ہمارے شوق کی یہ انتہا تھی
قدم رکھا کہ منزل راستا تھی

بچھڑ کے ڈار سے بن بن پھرا وہ
ہرن کو اپنی کستوری سزا تھی

کبھی جو خواب تھا وہ پا لیا ہے
مگر جو کھو گئی وہ چیز کیا تھی

میں بچپن میں کھلونے توڑتا تھا
مرے انجام کی وہ ابتدا تھی

محبت مر گئی مجھ کو بھی غم ہے
مرے اچھے دنوں کی آشنا تھی

جسے چھو لوں میں وہ ہو جائے سونا
تجھے دیکھا تو جانا بد دعا تھی

مریض خواب کو تو اب شفا ہے
مگر دنیا بڑی کڑوی دوا تھی

Facebook Comments


escort istanbul
mersin escort bayan
berlin callgirls