fasaanaa ab koi injaam paana chahta hai
talluq totnay ko ik bahana chahta hai

jahan ik shakhs bhi milta nahi hai chahanay se
wahan yeh dil hatheli par zamana chahta hai

mujhe samgha rahi hai aankhh ki tehreer is ki
woh adhay rastay se lout jana chahta hai

yeh lazim hai ke ankhen daan kar day ishhq ko woh
jo –apne khawab ki tabeer paana chahta hai

bohat ukta gaya hai be sukooni se woh apni
samandar jheel ke nazdeek aana chahta hai

woh mujh ko aazmata hi raha hai zindagi bhar
magar yeh dil ab is ko aazmana chahta hai

usay bhi zindagi karni parre gi ‘miir’ jaisi
sukhan se gir koi rishta nibhana chahta hai

فسانہ اب کوئی انجام پانا چاہتا ہے
تعلق ٹوٹنے کو اک بہانہ چاہتا ہے

جہاں اک شخص بھی ملتا نہیں ہے چاہنے سے
وہاں یہ دل ہتھیلی پر زمانہ چاہتا ہے

مجھے سمجھا رہی ہے آنکھ کی تحریر اس کی
وہ آدھے راستے سے لوٹ جانا چاہتا ہے

یہ لازم ہے کہ آنکھیں دان کر دے عشق کو وہ
جو اپنے خواب کی تعبیر پانا چاہتا ہے

بہت اکتا گیا ہے بے سکونی سے وہ اپنی
سمندر جھیل کے نزدیک آنا چاہتا ہے

وہ مجھ کو آزماتا ہی رہا ہے زندگی بھر
مگر یہ دل اب اس کو آزمانا چاہتا ہے

اسے بھی زندگی کرنی پڑے گی میرؔ جیسی
سخن سے گر کوئی رشتہ نبھانا چاہتا ہے

Facebook Comments

شاعر کا مزید کلام



escort istanbul
mersin escort bayan
berlin callgirls