darya mein moti, ae mouj be baak
saahil ki soghaat! khar-o-khas o khaak

mere Sharer mein bijli ke johar
lekin niistaan tera hai num naak

tera zamana, taseer teri
nadaa! nahi yeh taseer aflaaq

aisa junoo bhi dekha hai mein nay
jis nay siye hain taqdeer ke chaak

kaamil wohi hai rndi ke fun mein
masti hai jis ki be minnat taak

rakhta hai ab taq mekhana Sharq
woh me ke jis se roshan ho idraak

ahal nazar hain Europe se naumed
un amton ke batin nahi pak

دريا ميں موتي ، اے موج بے باک
ساحل کي سوغات ! خاروخس و خاک

ميرے شرر ميں بجلي کے جوہر
ليکن نيستاں تيرا ہے نم ناک

تيرا زمانہ ، تاثير تيري
ناداں ! نہيں يہ تاثير افلاک

ايسا جنوں بھي ديکھا ہے ميں نے
جس نے سيے ہيں تقدير کے چاک

کامل وہي ہے رندي کے فن ميں
مستي ہے جس کي بے منت تاک

رکھتا ہے اب تک ميخانہ شرق
وہ مے کہ جس سے روشن ہو ادراک

اہل نظر ہيں يورپ سے نوميد
ان امتوں کے باطن نہيں پاک

Facebook Comments


escort istanbul
mersin escort bayan
berlin callgirls