chasham be khawab hui shehar ki weerani se
dil utartaa hi nahi takhat sulemani se

pehlay to raat hi katay se nahi kat’ti thi
aur ab din bhi guzarta nahi aasani se

hum ny ik dosray ke aks ko jab qatal kya
aaina dekh raha tha hamein herani se

ab ke hai lab aabb hi mar jayen ge
pyaas aisi hai ke bujhti hi nahi pani se

aankhh p_hchanti hai lotney walon ko magar
kon pouchye ga meri be sir o samani se

yun hi dushman nahi Dur aaya maray aangan mein
dhoop ko raah mili pairr ki uryani se

koi bhi cheez salamat nah rahay ghar mein ‘Saleem’
faida kya hai bhala aisi nigehbani se

چشم بے خواب ہوئی شہر کی ویرانی سے
دل اترتا ہی نہیں تخت سلیمانی سے

پہلے تو رات ہی کاٹے سے نہیں کٹتی تھی
اور اب دن بھی گزرتا نہیں آسانی سے

ہم نے اک دوسرے کے عکس کو جب قتل کیا
آئینہ دیکھ رہا تھا ہمیں حیرانی سے

اب کے ہے لب آب ہی مر جائیں گے
پیاس ایسی ہے کہ بجھتی ہی نہیں پانی سے

آنکھ پہچانتی ہے لوٹنے والوں کو مگر
کون پوچھے گا مری بے سر و سامانی سے

یوں ہی دشمن نہیں در آیا مرے آنگن میں
دھوپ کو راہ ملی پیڑ کی عریانی سے

کوئی بھی چیز سلامت نہ رہے گھر میں سلیمؔ
فائدہ کیا ہے بھلا ایسی نگہبانی سے

Facebook Comments