aisay chutay hain tasawwur mein tujhy hum chup chaap
jaisay phoolon ko chuva karti hai shabnam chup chaap

tark ulfat pay bhi kar jatay hain aksar gumraah
mere khowabon ko tre gisoye par khham chup chaap

jaisay karti hi nahi tang hamein yeh masoom
kaisay jati hai shab hijar sehar dam chup chaap

koi milta hi nahi is ko sukhan ka mauzo
baithi rehti hai mere paas shab gham chup chaap

shorish waqt nay bakhsh nahi jaye afsos
yani karna hi para zeist ka maatam chup chaap

mouj hangaam cheraghan hai nah woh rang Abeer
shokhi-e-eid bhi khamosh Mehram chup chaap

meri ankhen hain tre husn ki goya tasweer
mein nay dekha hai tre husn ka aalam chup chaap

daur iblees ke yeh baada-gusaaran ‘majaaz’
peetay rehtay hain jahannum ka jahannum chup chaap

ایسے چھوتے ہیں تصور میں تجھے ہم چپ چاپ
جیسے پھولوں کو چھوا کرتی ہے شبنم چپ چاپ

ترک الفت پہ بھی کر جاتے ہیں اکثر گمراہ
میرے خوابوں کو ترے گیسوئے پر خم چپ چاپ

جیسے کرتی ہی نہیں تنگ ہمیں یہ معصوم
کیسے جاتی ہے شب ہجر سحر دم چپ چاپ

کوئی ملتا ہی نہیں اس کو سخن کا موضوع
بیٹھی رہتی ہے میرے پاس شب غم چپ چاپ

شورش وقت نے بخشی نہیں جائے افسوس
یعنی کرنا ہی پڑا زیست کا ماتم چپ چاپ

موج ہنگام چراغاں ہے نہ وہ رنگ عبیر
شوخیٔ عید بھی خاموش محرم چپ چاپ

میری آنکھیں ہیں ترے حسن کی گویا تصویر
میں نے دیکھا ہے ترے حسن کا عالم چپ چاپ

دور ابلیس کے یہ بادہ گساران مجازؔ
پیتے رہتے ہیں جہنم کا جہنم چپ چاپ

Facebook Comments


escort istanbul
mersin escort bayan
berlin callgirls