mujh se bhi woh millti thi
is ke hont gulaabii they
is ki aankhh mein masti thi
mein bhi bhola bhatka sa
woh bhi bholi bhadkte thi
shehar ki har abad sarrak !
is ke ghar ko jati thi !
lekin woh kya karti thi !
larki thi ke paheli thi !
ultay seedhay rustoon par
ankhen dhaanp ke chalti thi
bheegi bheegi raton mein
tanha tanha roti thi
melay melay kapron mein
ujli ujli lagti thi
is ke saaray khawab naye
aur tabeer purani thi

مجھ سے بھی وہ ملتی تھی
اس کے ہونٹ گلابی تھے
اس کی آنکھ میں مستی تھی
میں بھی بھولا بھٹکا سا
وہ بھی بھولی بھٹکی تھی
شہر کی ہر آباد سڑک!
اس کے گھر کو جاتی تھی!
لیکن وہ کیا کرتی تھی!
لڑکی تھی کہ پہیلی تھی!
الٹے سیدھے رستوں پر
آنکھیں ڈھانپ کے چلتی تھی
بھیگی بھیگی راتوں میں
تنہا تنہا روتی تھی
میلے میلے کپڑوں میں
اجلی اجلی لگتی تھی
اس کے سارے خواب نئے
اور تعبیر پرانی تھی

Facebook Comments


escort istanbul
mersin escort bayan
berlin callgirls