ab woh tufaan hai nah woh shore hawaon jaissa
dil ka aalam hai tre baad khalaon jaissa

kash duniya maray ehsas ko wapas kar day
khamshi ka wohi andaaz sdaon jaissa

paas reh kar bhi hamesha woh bohat daur mila
is ka andaaz taghaful tha khudaon jaissa

kitni shiddat se baharon ko tha ehsaas-e-maal
phool khil kar bhi raha zard khizaoon jaissa

kya qayamat hai ke duniya usay sardar kahe
jis ka andaaz sukhan bhi ho gadaaon jaissa

phir tri yaad ke mausam ne jagaaye mehshar
phir maray dil mein utha shore hawaon jaissa

baarha khawab mein pa kar mujhe piyasa ‘mohsin’
is ki zulfon ne kya raqs ghataon jaissa

اب وہ طوفاں ہے نہ وہ شور ہواؤں جیسا
دل کا عالم ہے ترے بعد خلاؤں جیسا

کاش دنیا مرے احساس کو واپس کر دے
خامشی کا وہی انداز صداؤں جیسا

پاس رہ کر بھی ہمیشہ وہ بہت دور ملا
اس کا انداز تغافل تھا خداؤں جیسا

کتنی شدت سے بہاروں کو تھا احساس‌ مآل
پھول کھل کر بھی رہا زرد خزاؤں جیسا

کیا قیامت ہے کہ دنیا اسے سردار کہے
جس کا انداز سخن بھی ہو گداؤں جیسا

پھر تری یاد کے موسم نے جگائے محشر
پھر مرے دل میں اٹھا شور ہواؤں جیسا

بارہا خواب میں پا کر مجھے پیاسا محسنؔ
اس کی زلفوں نے کیا رقص گھٹاؤں جیسا

Facebook Comments