ab faisla karne ki ijazat di jaye
ya phir hamein manzil ki basharat di jaye

deewany hain hum jhoot bohat boltay hain
hum ko sir bazaar yeh izzat di jaye

phir gird Meh o saal mein att jayen ge
aaina banaya hai to soorat di jaye

israar hi karte ho to apna samjhoo
dena hi agar hai to mohabbat di jaye

woh jis ney mujhe qatal pay uksaya tha
is shakhs se milnay ki bhi mohlat di jaye

jab meri gawahi bhi maray haq mein nahi
phir shehar mein kis kis ki shahadat di jaye

hum jagtay rehne ke bohat aadi hain
hum ko shab Hijran ki masafat di jaye

chhar jaye to tabqaat ki ab jung ‘saliim’
kuch bhi ho magar hum ko nah zahmat di jaye

اب فیصلہ کرنے کی اجازت دی جائے
یا پھر ہمیں منزل کی بشارت دی جائے

دیوانے ہیں ہم جھوٹ بہت بولتے ہیں
ہم کو سر بازار یہ عزت دی جائے

پھر گرد مہ و سال میں اٹ جائیں گے
آئینہ بنایا ہے تو صورت دی جائے

اصرار ہی کرتے ہو تو اپنا سمجھو
دینا ہی اگر ہے تو محبت دی جائے

وہ جس نے مجھے قتل پہ اکسایا تھا
اس شخص سے ملنے کی بھی مہلت دی جائے

جب میری گواہی بھی مرے حق میں نہیں
پھر شہر میں کس کس کی شہادت دی جائے

ہم جاگتے رہنے کے بہت عادی ہیں
ہم کو شب ہجراں کی مسافت دی جائے

چھڑ جائے تو طبقات کی اب جنگ سلیمؔ
کچھ بھی ہو مگر ہم کو نہ زحمت دی جائے

Facebook Comments