aab-o-hwa hai barsar-e-paikar kon hai
mere siwa yeh mujh mein girftar kon hai

ik roshni si raah dukhati hai har taraf
dosh sun-hwa pay sahib raftaar kon hai

aik aik kar ke khud se bichernay lagey hain hum
dekho to ja ke qaafla salaar kon hai

boseedgi ke khauf se sab uth ke chal diye
phir bhi yeh zair saya deewar kon hai

qadmon mein saaye ki terhan roanday gaye hain hum
hum se ziyada tera talabb gaar kon hai

phela raha hai daman shab ki hikaytein
Sooraj nahi to yeh pas kuhsaar kon hai

kya shaiy hai jis ke wastay tootay parre hain log
yeh bheer kyun hai ronaqe bazaar kon hai

ae dil ab apni lau ko bacha le ke shehar mein
to jal bujha to tera Azaa daar kon hai

ab taq isi khayaal se soye nahi ‘Saleem’
hum so gaye to phir yahan be daar kon hai

آب و ہوا ہے برسر پیکار کون ہے
میرے سوا یہ مجھ میں گرفتار کون ہے

اک روشنی سی راہ دکھاتی ہے ہر طرف
دوش ہوا پہ صاحب رفتار کون ہے

ایک ایک کر کے خود سے بچھڑنے لگے ہیں ہم
دیکھو تو جا کے قافلہ سالار کون ہے

بوسیدگی کے خوف سے سب اٹھ کے چل دیئے
پھر بھی یہ زیر سایۂ دیوار کون ہے

قدموں میں سائے کی طرح روندے گئے ہیں ہم
ہم سے زیادہ تیرا طلب گار کون ہے

پھیلا رہا ہے دامن شب کی حکایتیں
سورج نہیں تو یہ پس کہسار کون ہے

کیا شے ہے جس کے واسطے ٹوٹے پڑے ہیں لوگ
یہ بھیڑ کیوں ہے رونق بازار کون ہے

اے دل اب اپنی لو کو بچا لے کہ شہر میں
تو جل بجھا تو تیرا عزا دار کون ہے

اب تک اسی خیال سے سوئے نہیں سلیمؔ
ہم سو گئے تو پھر یہاں بے دار کون ہے

Facebook Comments