batayen kya hamaray zakham zakham ke ghulaab

mah o aftaab sab gawah hain

ke hum ney kya nahi saha

sa’abton ke darmia

hamaray sath ik yaqeen raha

gawah yeh zameen aur zamaan rahay

nah aaj sogwaar hain

nah kal hi noha khwan rahay

Sharer jo kal lahoo mein they

woh aaj bhi lahoo mein hain

hamaray khawab

saans le rahay hain aaj bhi

koi diya bujha nahi

ke hum abhi thakey nahi

aur ik sadi se doosri talak

safar mein hain

بتائیں کیا ہمارے زخم زخم کے گلاب

ماہ و آفتاب سب گواہ ہیں

کہ ہم نے کیا نہیں سہا

صعوبتوں کے درمیاں

ہمارے ساتھ اک یقیں رہا

گواہ یہ زمین اور زماں رہے

نہ آج سوگوار ہیں

نہ کل ہی نوحہ خواں رہے

شرر جو کل لہو میں تھے

وہ آج بھی لہو میں ہیں

ہمارے خواب

سانس لے رہے ہیں آج بھی

کوئی دیا بجھا نہیں

کہ ہم ابھی تھکے نہیں

اور اک صدی سے دوسری تلک

سفر میں ہیں

Facebook Comments


escort istanbul
mersin escort bayan
berlin callgirls