ishhq mujh ko nahi wehshat hi sahi

meri wehshat tri shohrat hi sahi

qata kijiyej nah talluq hum se

kuch nahi hai to adawat hi sahi

mere honay mein hai kya ruswai

ae woh majlis nahi khalwat hi sahi

hum bhi dushman to nahi hain apne

ghair ko tujh se mohabbat hi sahi

apni hasti hi se ho jo kuch ho

aag_hi gir nahi ghaflat hi sahi

Umar har chand ke hai barq-e Khiraam

dil ke khoo karne ki fursat hi sahi

hum koi tark wafa karte hain

nah sahi ishhq museebat hi sahi

kuch to day ae fallak nainsaf

aah o faryaad ki rukhsat hi sahi

hum bhi tasleem ko khoo dalain ge

be nayazi tri aadat hi sahi

yaar se chairr chali jaye ASAD

gir nahi wasal to hasrat hi sahi

عشق مجھ کو نہیں وحشت ہی سہی

میری وحشت تری شہرت ہی سہی

قطع کیجئے نہ تعلق ہم سے

کچھ نہیں ہے تو عداوت ہی سہی

میرے ہونے میں ہے کیا رسوائی

اے وہ مجلس نہیں خلوت ہی سہی

ہم بھی دشمن تو نہیں ہیں اپنے

غیر کو تجھ سے محبت ہی سہی

اپنی ہستی ہی سے ہو جو کچھ ہو

آگہی گر نہیں غفلت ہی سہی

عمر ہر چند کہ ہے برق خرام

دل کے خوں کرنے کی فرصت ہی سہی

ہم کوئی ترک وفا کرتے ہیں

نہ سہی عشق مصیبت ہی سہی

کچھ تو دے اے فلک ناانصاف

آہ و فریاد کی رخصت ہی سہی

ہم بھی تسلیم کو خو ڈالیں گے

بے نیازی تری عادت ہی سہی

یار سے چھیڑ چلی جائے اسد

گر نہیں وصل تو حسرت ہی سہی

Facebook Comments


escort istanbul
mersin escort bayan
berlin callgirls