tri mohabbat mein hum ne khud ko mita liya tha
har aik jazbay ke samnay sir jhuka liya tha

woh tar y mehfil mein log hum par jo hans rahay they
to apni haalat pay hum ne khud muskura liya tha

hamara chehra hamaray jazbay ayaan nah kar day
khud –apne chehray pay hum ne Palu gira liya tha

teri judai ki raat thi is qader andheri
diye they yaado ke jin se dil jagmaga liya tha

wafa ka Sooraj damak raha tha magar ahe Haala
riya ke baadal ne barh cross ko chhupa liya tha

تری محبت میں ہم نے خود کو مٹا لیا تھا
ہر ایک جذبے کے سامنے سر جھکا لیا تھا

وہ تر ی محفل میں لوگ ہم پر جو ہنس رہے تھے
تو اپنی حالت پہ ہم نے خود مسکرا لیا تھا

ہمارا چہرہ ہمارے جذبے عیاں نہ کر دے
خود اپنے چہرے پہ ہم نے پلو گرا لیا تھا

تیری جدائی کی رات تھی اس قدر اندھیری
دیے تھے یادوں کے جن سے دل جگمگا لیا تھا

وفا کا سورج دمک رہا تھا مگراے ہالہ
رِیا کے بادل نے بڑھ کراس کو چھپا لیا تھا

Facebook Comments

شاعر کا مزید کلام