کراچی طیارہ حادثے میں شہدا کی تعداد بڑھتی جا رہی ہے

Karachi Air Crash
22مئی2020
(فوٹو : سوشل میڈیا)

ویب ڈیسک: (کراچی) پی آئی اے کا طیارہ کراچی ایئرپورٹ کے قریب گر کر تباہ ہو گیا، جس کے نتیجے میں‌ 66 افراد جاں‌ بحق ہو گئے، طیارے کے 2 مسافر معجزانہ طور پر بچ گئے، وزیر اعظم نے طیارہ حادثے کی فوری تحقیقات کا حکم دے دیا ہے۔

اے آر وائی نیوز کی رپورٹ کے مطابق کراچی ایئرپورٹ کے قریب جناح گارڈن میں پی آئی اے کا طیارہ گر کر تباہ ہو گیا جس کے نتیجے میں‌ 66 افراد جاں ‌بحق ہو گئے۔ پی آئی اے کی پرواز پی کے 8303 لاہور سے کراچی آ رہی تھی، طیارہ گرنے پر سول ایوی ایشن کی جانب سے ایمرجنسی نافذ کر دی گئی جبکہ سول ایوی ایشن، ریسکیو اور پولیس کی ٹیمیں طیارہ گرنے کی جگہ پر پہنچ گئیں۔

طیارہ گرتے ہی ہولناک آگ لگ گئی اور پورے علاقے میں دھواں ہی دھواں پھیل گیا، طیارہ گرنے کے مقام پر گھروں کو نقصان پہنچا اور گاڑیاں بھی تباہ ہوئیں۔

یہ بھی ملاحظہ کیجئے۔ فلوریڈا میں چھوٹے طیارے کی ہائی وے پر ہنگامی لینڈنگ! طیارہ حادثے سے بال بال بچ گیا

اطلاعات کے مطابق طیارہ خالی مقام پر گرا ہے، طیارہ ایئربس 320 میں 100 سے زائد مسافر موجود تھے، کپتان نے کنٹرول ٹاور کو طیارے کے لینڈنگ گیئرمیں خرابی کی اطلاع دی اور کپتان کو گائیڈ لائن دینے کے دوران طیارہ ریڈار سے غائب ہوا۔

یہ بھی ملاحظہ کیجئے۔ دنیا کے بلند ترین پہاڑ ماؤنٹ ایورسٹ کے قریب ایک طیارہ حادثے کا شکار ہو گیا

ترجمان پی آئی اے نے ایئربس 320 کے گرنے کی تصدیق کر دی ہے اور پی آئی اے کے آپریشنل ملازمین کو ڈیوٹی پر طلب کر لیا گیا ہے، سی ای او پی آئی اے ایئرمارشل ارشد ملک نے ناگہانی حادثے پر گہرے دکھ کا اظہار کیا ہے۔

یہ بھی ملاحظہ کیجئے۔ لاہور ایئر پورٹ پر لینڈنگ کے دوران طیارہ حادثے سے بال بال بچ گیا

ترجمان پی آئی اے جبکہ سول ایوی ایشن کا کہنا ہے کہ پی آئی اے کے طیارے میں 99 مسافر اور 8 کریو ممبر سوار تھے۔ ڈی آئی جی نعمان صدیقی کا کہنا ہے کہ طیارہ گرنے سے زمین پر 4 گھر تباہ ہوئے ہیں، طیارہ گرنے کی جگہ کو گھیراؤ کر کے مکمل سیل کر دیا گیا۔ طیارہ حادثہ کے 8 افراد کی لاشیں اور 10 زخمیوں کو اسپتال منتقل کر دیا گیا ہے۔

Facebook Comments