سندھ اسمبلی مچھلی بازار کا منظر پیش کرنے لگی! حکومتی اور اپوزیشن اراکین بپھر گئے

16اپریل2019
(فوٹو فائل)

ویب ڈیسک: (کراچی) سندھ اسمبلی میں حکومتی اور اپوزیشن اراکین میں تلخ کلامی پر دونوں فریقین کی جانب سے ایک دوسرے کی قیادت کو برا بھلا کہا گیا جبکہ حلیم عادل شیخ اور اسپیکر کے درمیان تلخ جملوں کاتبادلہ بھی ہوا، جس کی وجہ سے اسپیکر کو کچھ دیر کیلئے کاروائی روکنا پڑ گئی۔

تفصیلات کچھ اس طرح ہیں کہ اسمبلی کی کارروائی شروع ہوئی تو پی پی پی کےشرجیل میمن اورفیاض بٹ جبکہ پی ٹی آئی کےراجا اظہراورارسلان گھمن روبرو آ گئے، تاہم وزیر بلدیات سعید غنی نے اس دوران بیچ بچاؤ کرایا۔ اسپیکر آغا سراج درانی نے کہا کہ ایک بارمیری ضمانت ہو جائے تو اسمبلی گیٹ سے باہر نکل کرمجھ سے بات کریں، اپوزیشن سمجھتی ہے میں بہت کرپٹ آدمی ہوں، اپوزیشن والے یہ بتانے کی کوشش کر رہے ہیں کہ میں ہندوستان سے آیاہوں، میں کافی عرصے سےاسمبلی آ رہا ہوں۔

دوسری طرف پی ٹی آئی کے رکن سندھ اسمبلی حلیم عاد شیخ نے کہا کہ اپوزیشن رہنماؤں کو ایوان میں بولنے کی اجازت نہیں دی جاتی، پرائیویٹ ممبرڈے پر بھی اپوزیشن اراکین کو خاموش رہنے کی تلقین کرتے ہیں۔

اسپیکر سندھ اسمبلی کا مزید کہنا تھا کہ میں کتنا ہی برا ہو ں لیکن اس وقت اسمبلی کا اسپیکر ہوں، فردوس شمیم نقوی نے میرے لیے غلط الفاظ استعمال کئے ہیں۔

Facebook Comments