بلڈ پریشر کے مریض دوائیاں چھوڑ دیں! ماہرین نے ایسا علاج بتا دیا کہ آپ خوش ہو جائیں گے

Blood Pressure Patient
05مارچ2019
(فوٹو فائل)

ویب ڈیسک: (لندن) ماہرین کا کہنا ہے کہ بلند فشارِ خون(بلڈ پریشر) کے مریض اگر آدھا گھنٹہ نیلی روشنی میں بیٹھ جائیں تو انکے خون کی گردش معمول پر آ جائے گی۔

تفصیلات کچھ اس طرح ہیں کہ انگلینڈ کے شہر گِلڈ فرڈ میں’’سری یونیورسٹی‘‘ کے ماہرینِ طب نے نیلی روشنی میں بیٹھنے کا دلچسپ فائدہ ڈھونڈ لیا۔

ماہرین نے تحقیق کرتے ہوئے 14 بلڈ پریشر کے مریض مردوں کو آدھے گھنٹے تک نیلی روشنی میں بٹھایا ،جس کے بعد ان کا بلڈ پریشر چیک کیا گیا،حیران کن طور پر ان تما م افراد کا بلڈ پریشر معمول پر آ گیا،دوسری طرف ماہرین نے بلڈ پریشر کے کچھ مریضوں کو ادویات دیں اور انہیں نیلی روشنی سے دور رکھا،دونوں گروپوں کے افراد کا جب موازنہ کیا گیا تو معلوم ہوا کہ تمام افراد کا بلڈ پریشر تقریباً ایک جیسا ہی ہے۔

ماہرین نے جب بلڈ پریشر کے مریضوں کو 450 نینو میٹرز خالص نیلی روشنی میں بٹھایا تو نہ صرف انکا بلڈ پریشر معمول پر آیا بلکہ انکے دل کی دھڑکن بھی متوازن رہی۔

ماہرین نے کہا کہ بلڈ پریشر ایک ایسی بیماری ہے جس کے علاج کیلئے لوگ مہنگی مہنگی ادویات استعمال کرتے ہیں،لیکن اب ایسا طریقہ دریافت ہو چکا ہے جو حیران کن ہونے کے ساتھ ساتھ فائدہ مند بھی ہے۔

اس تحقیقاتی ٹیم کے سربراہ پروفیسر کرسٹیان ہیس کہتے ہیں کہ نیلی روشنی انسانوں کیلئے فائدہ مند ہے،کیونکہ یہ انسانی جسم میں موجود نائٹرک آکسائیڈ کے اخراج کو یقینی بناتی ہے،جس کے بعد خون کی نالیاں پر سکون ہو جاتی ہیں اور نتیجے میں بلڈ پریشر کم ہو جاتا ہے۔

ماہرین نے نتیجہ اخذ کیا کہ سائنس کی ترقی اور جدید طرز کی زندگی نے انسانوں کو حد سے زیادہ مصروف ہونے کے ساتھ ساتھ بلڈ پریشر جیسی بیماری بھی بخشی،جو دل کی دیگر بیماریوں کا سبب بنی اور اس سے بہت سے لوگ متاثر ہوئے۔

Facebook Comments